ڈیری فارمنگ اور دودھ کا کاروبار شروع کرنا ہے کیسے کریں؟

اس مضمون میں ہم آپ کو ڈیری فارمنگ کے آغاز سے منافع کمانے تک تمام تر تفصیلات سے آگاہ کریں گے۔

دودھ کا کاروبار

دودھ کا بزنس موجودہ دور میں ابھرتا ہوا ایک کاروبار ہے ، اس لئے ہم نے اس بزنس میں ہاتھ ڈالنے کا فیصلہ کیا ہے ، یہ ڈیری فارم ابتدائی طور پہ 12 جانوروں سے شروع کیا جائے گا جس میں سات بھینسیں اور پانچ گائیاں لی جائیں گی ۔ بھینسوں میں نیلی راوی نسل اور گائیوں میں ساہیوال / چولستانی کو ترجیح دی جائے گی ان 12 جانوروں کے ساتھ 12 بچے بھی ہوں گے۔ اچھی نسل کی ایسی بھینس اور گائے منتخب کی جائے گی جو کم ازکم روزانہ دس کلو دودھ دینے والی ہو ۔

ڈیری فارمنگ کے لیے جگہ کا انتخاب

مجوزہ ڈیری فارم کے لئے تقریباً دو کنال رقبہ کی ضرورت پڑ سکتی ہے ، جہاں پختہ شیڈ بنایا جائے گا جس کے ساتھ گھاس کھلانے کے لئے کھرلیاں بھی پختہ ہی ہوں گی ، ہوادار اور کھلی جگہ کا انتخاب کیا جائے گا جانوروں کو نہلانے کے لئے موٹر پمپ ، تالاب وغیرہ کا بھی کا بندوبست بھی کیا جائے گا ۔۔ گھاس کے لئے ایک ایکڑ زرعی اراضی بطور مستاجری لی جائے گی جس میں موسم کے حساب سے چارہ کاشت کیا جائے گا ۔12 جانوروں کےلئے تین مستقل اور دو عارضی ملازمین کی ضرورت ہوگی ۔

ابتدائی اخراجات کا تخمینہ

ایک ایکڑ کی دو سالہ مستاجری برائے گھاس 1لاکھ 20ہزار
گھاس کی کاشت وغیرہ 15 ہزار روپے
شیڈ کے لئے درکار جگہ کا کرایہ دو سال کے لئے تقریباً 80 ہزار روپے
شیڈ کی تعمیر 3 لاکھ 85 ہزار 9 سو روپے
دیگر ضروری سامان برائے فارم 40 ہزار روپے
تعمیر کمرہ و کچن  برائے ملازمین 1 لاکھ 10 ہزار روپے
ٹوکہ مشین ، بجلی میٹر وغیرہ 41 ہزار روپے
توڑی 1 ہزار من 3 لاکھ 20 ہزار روپے
ایک سو من گندم دلیہ 1 لاکھ 20 ہزار روپے
ایک سو بوری ونڈہ 1 لاکھ 40 ہزار روپے
ایک سو بوری کھل 1 لاکھ 50 ہزار روپے
ایک سو بوری ٹکڑے 1 لاکھ 20 ہزار روپے
تین من سرسوں آئل 40 ہزار روپے

جانوروں کی لاگت

ایک تازہ بھینس ڈیڑھ سے دو لاکھ تک آئے گی اس حساب سے سات بھینسوں کی قیمت تقریباً 14 لاکھ روپے ہوگی جبکہ گائے کی قیمت 1 لاکھ 30 ہزار سے 70 ہزار تک ہوگی جو کہ اوسطا 5 گائیوں پہ 8 لاکھ روپے لگ سکتے ہیں ۔
ٹوٹل : 3886900 روپے

آمدنی کا تخمینہ

دودھ کی روزانہ کی پیداوار تقریباً 100 کلو
اوسطا ریٹ فی کلو 65روپے ( مختلف علاقوں میں ریٹ مختلف ہوسکتا ہے )‏100×65= 6500
ماہانہ دودھ کی پیداوار سے حاصل شدہ رقم
‏6500×30 = 195000
پہلے سال چھ ماہ میں دودھ سے حاصل شدہ رقم
‏195000×6= 1170000
دوسرے سال کے چھ ماہ میں دودھ حاصل شدہ رقم
‏195000×6= 1170000
بچھڑوں کی تخمینہ قیمت 20 ہزار فی کس
‏20000×12 = 240000
روزانہ کے اخراجات فی جانور 200
‏200×12 = 24000
دو سال کے اخراجات
‏24000×24= 576000

خلاصہ

کل سرمایہ کاری – 38٫86900
رننگ اخراجات – 200000
ٹوٹل اخراجات تقریباً – 4000000
کل آمدنی سالانہ – 1170000
بچھڑوں کی فروخت سے حاصل شدہ رقم – 240000
ٹوٹل میزانیہ – 14100000

دیگر روزمرہ کے اخراجات اور ان کا حل

اس حساب سے دیکھا جائے تو بجلی کے بلز ، سیلریز ، اخراجات ، دودھ کی کمی زیادتی ، دوائی ، سامان کی توڑ پھوڑ اور سبھی قسم کے اخراجات نکال کر تقریباً 10 لاکھ روپے ایک سال میں بچ سکتے ہیں جبکہ جانور اسی طرح موجود ہیں ، دوسرے سال میں آمدنی میں %50 کمی کے ساتھ تقریباً 5 لاکھ روپے اور تیسرےسال میں پھر دس لاکھ روپے کی بچت ہوگی ۔
واضح رہے کہ تمام اخراجات جانوروں کے دودھ سے نکالے گئے ، ابتدائی سرمایہ کے علاوہ کوئی اور سرمایہ نہیں لگایا گیا اور تین سال میں 25 لاکھ روپے حاصل کر لئے گئے جوکہ ٹوٹل سرمایہ کاری کا نصف سے زائد ہے۔
مختصرا یوں سمجھ لیجئے کہ ایک وقت کا دودھ جانور کھا جائے گا اور دوسرے وقت کا دودھ بچت میں جائے گا ، اس طرح ایک سال میں ایک جانور اپنی آدھی قیمت نکال لے گا دوسرے سال میں رقم کے دوسرے حصے کا ایک تہائی ہاتھ آجائے گا اور تیسرے سال میں باقی رقم بھی مکمل ہو جائے گی۔
بچھڑوں / کٹوں کی رقم حاملہ جانور کی خدمت پہ مامور ملازمین کی تنخواہوں پہ لگائی جائے گی جو کہ تنخواہ کا نصف حصہ ہے ، دودھ سے حاصل شدہ رقم سے جانوروں کی خریداری بھی کی جا سکتی ہے تاکہ اگر ایک جانور حمل کے باعث دودھ دینا بند کردے تو دوسرا جانور دودھ کی کھپت پوری کرتا رہے۔

نتیجہ

40 لاکھ کے اس بزنس کے لئے دل گردہ درکار ہوگا اس لئے اگر بجٹ نہ ہو تو نصف جانور ( 4 بھینسیں 2 گائیاں) بھی رکھے جا سکتے ہیں خرچ آدھا ہوجائے گا جہاں 40 لاکھ رہے تھے وہاں 20 لاکھ لگیں گے۔ اب چونکہ اتنے سرمایہ پہ رسک لینا ہر ایک کے بس کی بات نہیں اس لئے اس کی ترتیب یہ بنائی ہے کہ جو حصہ رکھنے کے خواہش مند ہوں وہ جانوروں کی تعداد کے حساب سے حصہ رکھیں مثلاً کسی نے دو جانور لے لئے کسی نے چار لے لئے کسی نے ایک لے لیا اس طرح نفع اور نقصان بھی تقسیم ہو جائے گا اور رسک بھی یکجا نہیں ہوگا اور چھوٹا سرمایہ کار بھی مستفید ہو سکے گا۔
اگر اس پروڈکٹ کو پیکنگ میں دیا جائے ایکسپائری ڈیٹ کے ساتھ تو برانڈنگ کے فوائد سے بھی مستفید ہوا جا سکتا ہے
اس فزیبلٹی پہ آپ اپنے دوستوں کا ایک چھوٹا سا گروپ بنا لیجئے اور سرمایہ کاری سے بسم اللہ کیجئے ۔ اگر کوئی ہماری ٹیم کا ممبر بننا چاہے تو بھی خوش آمدید ۔ کم ازکم تین لاکھ روپے سے ایک جانور کے ذریعے شامل ہوا جا سکتا ہے اور نفع ماہانہ بنیاد پہ ملے گا ۔ ان شاء اللہ
#dairyfarming
#seekhkheyga
#Pakistan
#weversity
#coursesonline

Leave a comment

Your email address will not be published.